Author Topic: تعارف ( तआर्रुफ़) : ابھیشیک شکلا अभिषेक शुक्ला Hindi UrduAbhishek Shukla's Poetry  (Read 1002 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Syed Anwar Jawaid Hashmi

  • phpBB Moderators
  • Sukhan Fehm
  • *****
  • Posts: 953
  • Karma: 61
  • S Anwer Jawad Hashmi,Poet,Author,Journalist
ادب نامہ
تعارف ( तआर्रुफ़) : ابھیشیک شکلا अभिषेक शुक्ला Abhishek Shukla
پیدائش 14 جولائی 1987۔ لکھنو ( بھارت) سے تعلق رکھنے والے خوبصورت لب و لہجے
اور منفرد انداز کے نوجوان شاعر۔ لکھنو یونیورسٹی سے کامرس میں ماسٹرز کیا
اور آجکل سٹیٹ بینک آف پٹیالا میں اسسٹنٹ مینیجر کے فرائض انجام دے رہے ہیں ۔
  ان کے دستیاب کلام سے چند اشعار
اُردو  شاعری ،، ابھیشک  شُکلا
////////////////////////////////////
تجھے چراغ کی عظمت کا کچھ پتا ہی نہیں
جلا رہا ہے تو پھر ٹھیک سے جلا مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ میں پیوست ہو تم یوں کہ زمانے والے
میری مٹی سے مرے بعد نکالیں گے تمہیں
ہم نے سوچا ہے کہ اس بار جنوں کرتے ہوئے
خود کو اس طرح سے کھو دیں گے کہ پالیں گے تمہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں چوٹ کر تو رہا ہوں ہوا کے ماتھے پر
مزہ تو تب تھا کہ کوئی نشان بھی پڑتا
عجیب خواہشیں اٹھتی ہیں اس خرابے میں
گزر رہے ہیں تو اپنا مکان بھی پڑتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اک خطا کی طرح تم سے ہو گیا تھا کبھی
اب اک سزا کی طرح خود کو کاٹتا ہوا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب تری شکل میں ابہام زیادہ نہیں ہے
یعنی آنکھوں کے لیے کام زیادہ نہیں ہے
میرے اعصاب بھی واقف نہیں مجھ سے یعنی
میرے اندر بھی مرا نام زیادہ نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں سوچتا ہوں بہت زندگی کے بارے میں
یہ زندگی بھی مجھے سوچ کر نہ رہ جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ روانی تھی طبیعت میں کہ جس کے چلتے
ٹھہرے پانی میں مرا عکس خراب آیا تھا
صبح دیکھا تو بدن ذرد پڑا تھا میرا
رات خوابوں میں مرے تازہ گلاب آیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری کہانی سے کردار چل چکے ہیں ادھر
نجانے کس کی کہانی پہ جا کے بیٹھیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہنستا گاتا ہوا اک شہر ہے مجھ میں موجود
میرے اطراف میں تنہائی نہ کر پائے گا تو
تجھ سے منسوب ہین اشعار کچھ ایسے بھی مرے
غالبا جن کی پذیرائی نہ کر پائے گا تو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی چاک کی گردش کے سوا کچھ بھی نہیں
میں اگر کوزہ گری چھوڑ دوں، مٹی ہو جاؤں
کوئی دم تُو مرے چہرے پہ خوشی بن کے اُبھر
کوئی دم میں ترے چہرے کی اُداسی ہو جاؤں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ ہوا میں تو وہ کس درجہ پریشاں ہو گا
میرے ہونے کی خبر جس نے اُڑائی ہے بہت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے رکھتے ہیں کڑی دھوپ میں یم دھوپ کی سل
اور پھر سائے پہ سایہ بھی ہمی رکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تو خوش تھا چلو تنہائی کا پہلو نکلا
وہ روانہ بھی ہوا اور روانہ نہ ہوا
گھوم پھر کر اُسی اک شخص کی خاطر جینا
زندگی تجھ سے کوئی اور بہانا نہ ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلے مصرعے میں تجھے سوچ لیا ہو جس نے
جانا پڑتا ہے اسے مصرعہء ثانی کی طرف
ہم تو اک عمر ہوئی اپنی طرف آ بھی چکے
اور دل ہے کہ اُسی دشمن۔ جانی کی طرف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمام شہر پہ اک خامشی مسلط ہے
اب ایسا کرکہ کسی دن مری زباں سے نکل
مقام و وصل تو ارض و سما کے بیچ میں ہے
میں اس زمین سے نکلوں تو آسماں سے نکل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گزر گیا ہے اگر قافلہ تو دیکھ آو
پسِ غبار کسی کی نظر نہ رہ جائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب سے گزرا ہے ادھر سے کوئی درویشِ خیال
اک سلگتا ہوا لوبان پڑا ہے مجھ میں
صرف یہ خاکِ بدن ہے جو ترے کام کی ہے
اور تو دشت کا سامان پڑا ہے مجھ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ آئینہ بھی تری ذات کے مشابہ ہے
دکھائی پڑنے لگا ہوں میں گہرے پانی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وصل ہوتا بھی تو ہم دونوں فنا ہو جاتے
آگ اس میں تھی بھری مجھ میں بھرا تھا پانی
اُس پہ آ آ کے پرندوں نے پڑھے تھا نوحہ
وہ جو تالاب میں تھوڑا سا بچا تھا پانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نمود پانے میں پھر کامیاب ہو گئے ہم
گلاب کہہ دیا ان سے گلاب ہو گئے ہم
نہ اس نے ہاتھ لگایا نہ اس نے باتیں کیں
پڑے پڑے یونہی خود میں خراب ہو گئے ہم
تھا ایک عام سا رد عمل محبت میں
سکون کر کے اسے اضطراب ہو گئے یم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر بھر دھوپ لپیٹے رہے اپنے تن سے
ہم سے پہنی نہ گئی اس کی اتاری ہوئی شام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں کی باتیں یہیں کا سلیقہ چاہتی ہیں
زمیں کا ذکر نہ کر آسمانی لفظوں میں
جو مجھ میں ہے مرے ہونے کی ابتدا ہی سے
سما گیا ہے وہی رائیگانی لفظوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں یونہی نہیں اپنی حفاظت میں لگا ہوں
مجھ میں کہیں لگتا ہے کہ رخنہ ہوا تو ہے
وہ نور ہو، آنسو ہو کہ خوابوں کی دھنک ہو
جو کچھ بھی ان آنکھوں میں اکٹھا ہوا تو ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلی تو آئی تھی کچھ دُور ساتھ ساتھ مرے
پھر اُس کے بعد خدا جانے کیا ہوا شب کا
مرے خیال کے وحشت کدے میں آتے ہی
جنوں کی نوک سے پھوٹا ہے آبلہ شب کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک دن جو تجھے سوچنے میں گزرا تھا
تمام عمر اسی دن کی ترجمانی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جس پر اک شکن ہو جائوں اور دیکھا کرے دنیا
لگا ہے وقت اک ایسی ہی پیشانی بنانے میں
ہزاروں اجنبی چہروں سے گزری ہیں مری آنکھیں
یہ صورت زندگی کی جانی پہچانی بنانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کٹ گئیں ہوں نہ زمینوں سے طنابیں ان کی
آسمانوں کو اسی خوف میں جیتا ہوا دیکھ
تیری آنکھوں کے لیے اتنی سزا کافی ہے
آج کی رات مجھے خواب میں روتا ہوا دیکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو بن پڑے تو اٹھا لاؤ جا کے تیشہء لمس
میں اپنے جسم کی مٹی تلے دبا ہوا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مٹی سے، پانی سے، ہوا سے باتیں کیں
یعنی میں نے آج خدا سے باتیں کیں
زندہ رہنے کی ترکیب نرالی تھی
شب بھر میں نے خواب فنا سے باتیں کیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شرح۔ تخلیق۔ کائنات کرے
وہ خدا ہے تو مجھ سے بات کرے
ہے مزہ جب کہ وہ مجھے خود میں
خلق و مسمار ساتھ ساتھ کرے
بات کرنا تھی، بات کی اُس سے
کون اتنے تکلفات کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کے خزاں کے منہ سے سنا ہے بہار نے
میں جا رہی ہوں شاخوں سے پتے اتارنے
اپنی تلاش میں جو روانہ ہوئے انہیں
کچھ نقش۔ پا ادھار دیے ریگزار نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہیں بگاڑ نہ دے ہجر کی ہوا مجھ کو
بدن کو درس۔ بدن دے، پڑھا لکھا مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھیشیک شکلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادب نامہ۔ کا شکریہ
Sanwerj Hashmi
[/b]
Parindey Mosim-e-Gull ko jahaN pukarty thay
Ajeeb  dhoop thi Saiey thaken utaartey thay

Offline Muzaffar Ahmed Muzaffar

  • Administrator
  • Sukhan Fehm
  • *****
  • Posts: 1483
  • Karma: 79
MoHtaram Anwar Jawaid Sb taslimaat!

Mizaaj bakhaer? Janaab Abhishaekh Shakla ke kalaam se intekhaab dekha aor aek khushguwaar Haerat o massarrat samundar meN Ghutah zan ho geya keh is naojawaan shair Ki takhiq meN aesa anokha aor munfarid rang e izhaar hai keh Jo dil khenchta hai aor nae yani jadeed rang e izhaar ko baRe qareenah aor saliqah se barta geya hai aor kheyaal Ki nai parteN ujaagar Ki hai haiN Jo dilchasp bhi haiN aor Haeran kun bhi!!

Is ehtemaam ke liye mamnoon hoN.
Wassalam
Muzaffar